رضوانہ تشدد کیس: سول جج عاصم حفیظ کونوکری سے برخاست کرنیکی درخواست سماعت کیلئے منظور

51

اسلام آباد ہائیکورٹ  نے سول جج عاصم حفیظ کونوکری سے برخاست کرنے کی درخواست سماعت کے لیے منظور کرلی۔

اسلام آباد ہائیکورٹ کے چیف جسٹس عامر فاروق نے کمسن گھریلو ملازمہ رضوانہ پر سول جج عاصم حفیظ کی اہلیہ کی جانب سے تشدد کیس میں سول سوسائٹی کی جانب سے دائر درخواست کی سماعت کی جو سول سوسائٹی نیٹ ورک اسلام آباد کے صدرعبداللہ ملک نے دائرکی ۔

دوران سماعت عدالت نے کہا کہ سول جج کا معاملہ ویسے تو ایڈمنسٹریٹوسائیڈ پر ہے لیکن ہم جوڈیشل سائیڈ پربھی دیکھیں گے، اس دوران چیف جسٹس نے ڈپٹی اٹارنی جنرل احسن رضا اوراسٹیٹ کونسل کو روسٹرم پربلایا۔

چیف جسٹس عامرفاروق  نے واضح کیا کہ بچوں پرتشدد اور چائلڈ لیبر سے متعلق فیڈریشن کو دیکھنا چاہیے، ہمارے پاس اس سے متعلق تفصیلی درخواست آئی ہے۔

دوران سماعت چیف جسٹس اسلام آباد ہائیکورٹ نے طیبہ تشدد کیس کا حوالہ دیا اور کہا کہ اس سے قبل کمسن طیبہ تشدد کیس سمیت متعدد واقعات سامنے آئے، ہم اس درخواست  پر  وفاق اور ایڈووکیٹ جنرل آفس کو نوٹس کررہے ہیں۔

اسلام آباد ہائیکورٹ نے وفاقی حکومت اور ایڈووکیٹ جنرل آفس کونوٹس جاری کرتے ہوئے معاونت طلب کرلی اور  سول جج عاصم حفیظ کونوکری سے برخاست کرنے کی درخواست سماعت کے لیے منظور کرلی۔

عدالت نے کیس کی سماعت غیرمعینہ مدت تک ملتوی کردی۔

واضح رہے کہ سول جج عاصم حفیظ کی اہلیہ کمسن رضوانہ پرتشدد کے الزام میں جوڈیشل ریمانڈ پر ہیں جب کہ سول جج عاصم حفیظ کو کیس کی وجہ سے لاہور ہائیکورٹ نے اوایس ڈی بنا رکھا ہے۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.