صورتحال اتنی خراب نہیں جتنی بڑھاکر دکھائی جارہی ہے: چیئرمین ٹی ڈیپ

442

لاہور: چیف ایگزیکٹو ٹریڈ ڈویلپمنٹ اتھارٹی آف پاکستان زبیر موتی والا نے کہا ہے کہ اس میں کوئی شک نہیں کہ پاکستان مشکل ترین حالات سے گزر رہا ہے لیکن ان مشکل حالات کو مزید بڑھاکر دکھایا جارہا ہے۔ وہ لاہور چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری میں خطاب کر رہے تھے۔

لاہور چیمبر کے صدر کاشف انور اور سینئر نائب صدر ظفر محمود چوہدری نے بھی اس موقع پر خطاب کیا جبکہ سابق صدر محمد علی میاں اور ایگزیکٹو کمیٹی کے اراکین بھی موجود تھے۔چیئرمین ٹی ڈیپ نے کہا کہ ہماری برآمدات میں 8 سے 9 فیصد کمی ہوئی ہے تاہم 1.2 بلین ڈالر کی درآمدات بھی کم ہوئی ہیں۔ برآمدات میں 24 فیصد اضافے کے بعد 9 فیصد کمی ہوئی ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہم نے گزشتہ چند سالوں میں ایک ارب ڈالر کے یورو بانڈ کی ادائیگی کی ہے اور تقریباً 500 ملین ڈالر دیگر قرضوں کی ادائیگی کی ہے۔انہوں نے کہا کہ اس وقت پورٹ پر 5700 کنٹینرز کھڑے ہیں جن کی مالیت 183 ملین ڈالر ہے جسے اتنا بڑا مسئلہ قرار دیا جا رہا ہے۔

اس سلسلے میں ٹی ڈیپ نے وزارت خزانہ، وزارت تجارت، کے پی ٹی اور متعلقہ وزارتوں کے ساتھ میٹنگز کی ہیں جس میں انہیں بتایا گیا ہے کہ روکے گئے پیاز اور دالوں کے کنٹینرز کی کل مالیت 6000 ڈالر ہے۔انہوں نے کہا کہ ہر کوئی یہ کہہ رہا ہے کہ اس ملک میں کچھ نہیں بچا اور برین ڈرین کیا جا رہا ہے جو ہماری معیشت کا سب سے بڑا نقصان ہے۔

زرمبادلہ کے ذخائر کو ایک بہت بڑا مسئلہ سمجھا جاتا ہے اور اس کی بنیاد پر بہت سے خدشات اور خدشات پیدا کیے گئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ جب بے نظیر بھٹو کی پہلی حکومت آئی تو 435 ملین ڈالر کے زرمبادلہ کے ذخائر تھے۔

مشرف حکومت آئی تو 582 ملین ڈالر کے زرمبادلہ کے ذخائر تھے۔ اس وقت بھی 4.5 بلین ڈالر کے غیر ملکی ذخائر موجود ہیں۔لاہور چیمبر کے صدر کاشف انور نے کہا کہ ٹی ڈی اے پی کا کردار بہت حوصلہ افزا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے زرمبادلہ کے ذخائر کم ہو چکے ہیں اور ہمارے کنٹینرز بھی اس وقت بندرگاہ پر پھنسے ہوئے ہیں۔ ہم نے بارہا واضح کیا ہے کہ ہم ریاست کے ساتھ کھڑے ہیں۔

ریاست ہماری ماں ہے اور ہمیں اپنی ماں سے شکایت کرنی ہے۔انہوں نے کہا کہ ملک میں امن و امان کی صورتحال پیدا ہونے سے پہلے ہمیں فوری اقدامات کرنا ہوں گے۔لاہور چیمبر کے صدر نے کہا کہ حکومت سے پہلے اپوزیشن کو بیٹھ کر چارٹر آف اکانومی پر دستخط کرنا ہوں گے کیونکہ سیاسی استحکام کے لیے معاشی استحکام ضروری ہے۔انہوں نے کہا کہ روپے کی قدر میں کمی کے باعث کاروبار چلانا مشکل ہو رہا ہے۔ ہم چاہتے ہیں کہ TDAP ایکسپورٹ ڈویلپمنٹ فنڈ کو بڑھائے۔

رعایت کا فیصد بھی بڑھایا جائے۔انہوں نے کہا کہ ٹی ڈی اے پی لاہور چیمبر کو اپنی بین الاقوامی نمائشوں میں شامل کرے۔ سٹالز کے انتخاب کے لیے جو بھی ایس او پیز متعارف کرائے گئے ہیں انہیں لاہور چیمبر کے ساتھ شیئر کیا جانا چاہیے۔انہوں نے کہا کہ سونے کے شعبے کی بات کی جائے تو پچاس فیصد سونا اور پچاس فیصد ڈالر واپس لانے کا کہا جاتا ہے۔ کیا 100% سونا یا 100% ڈالر لانے کے لیے اصول نہیں بنایا جا سکتا؟ اس کے لیے ایک گولڈ بینک کھولنا ضروری ہے جہاں یہ بنیادی خام مال دستیاب ہو۔

انہوں نے ٹی ڈی پی کے چیف ایگزیکٹو سے مطالبہ کیا کہ لاہور چیمبر کا کوٹہ بین الاقوامی نمائشوں میں مختص کیا جائے اور کسی بھی برآمد کنندہ کے انتخاب اور مسترد ہونے کا طریقہ کار لاہور چیمبر کے ساتھ شیئر کیا جائے۔انہوں نے کہا کہ اگر کوئی برآمد کنندہ کسی بھی بین الاقوامی پویلین میں اپنے فنڈز سے شرکت کرنا چاہتا ہے تو ٹی ڈی اے پی ان کی سفارش کرے۔ اس معاملے میں ان کی سفارش بہت اہم ہے۔

انہوں نے کہا کہ ایکسپورٹ ڈویلپمنٹ فنڈ میں رعایت نہ دی جائے تو نمائشوں میں جگہ فراہم کی جائے۔ انہوں نے ایک بار پھر مطالبہ کیا کہ اس وقت عام معافی دینا بہت ضروری ہے۔چیئرمین ٹی ڈیپ نے کہا کہ اسحاق ڈار چار مرتبہ وزیر خزانہ رہ چکے ہیں اور وہ روپے کی قدر برقرار رکھنے کی کوشش کرتے رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ جب ڈالر کو کو228 روپے پر روکا گیا تھاتو کمرشل امپورٹرز 260روپے پر ادائیگی کررہے تھے۔ جب ڈالر آزاد ہوا تو اس کی قیمت اپنی اصل حالت میں واپس آگئی۔ انہوں نے کہا کہ اب کا فرق 35 روپے سے کم ہوکر 7 یا 8 روپے رہ گیا ہے۔

مارکیٹ کے قوانین کے مطابق، روپے کی قدر بالآخر اس وقت کم ہوتی ہے جب ڈالر آزادانہ طور پر چلایا جاتا ہے۔ اس قدر میں کمی کے نتیجے میں درآمد کنندہ کو نقصان اور برآمد کنندہ کو فائدہ ہوتا ہے۔انہوں نے کہا کہ فری فلوٹنگ ڈالر سے ہنڈی اور دیگر غیر قانونی ذرائع ختم ہو جاتے ہیں۔

انہوں نے امید ظاہر کی کہ کچھ وقت میں معاملات ٹھیک ہو جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں اپنی برآمدات کو بڑھانا ہے انہوں نے کہا کہ چین سے ہماری درآمدات تقریباً 20 ارب ڈالر ہیں۔چیئرمین ٹی ڈی اے پی نے کہا کہ جن اشیاءکی درآمد یقینی ہے، ان کی پاکستان میں صنعت لگانے کے لیے چین سے بات کی جائے جس سے ہمارے فارن ریزرو میں بیس سے تیس فیصد کا فرق پڑے گا۔

انہوں نے کہا کہ "میں نے حکومت کو کفایت شعاری کے اقدامات کی سفارش کی ہے” جبکہ سرکاری عہدیداران کو دئیے گئے پٹرول کارڈ آدھے کرنے کی تجویز بھی دی گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ گیس گیسرز کو سولر سے تبدیل کرنا ہو گا۔ پاکستان کی تیس فیصد آبادی شہروں میں اور ستر فیصد دیہی علاقوں میں رہتی ہے۔انہوں نے کہا کہ بینک کرپشن، غیر ملکی ذخائر جیسے مسائل اسی تیس فیصد کیٹیگری سے تعلق رکھتے ہیں۔ باقی ستر فیصد طبقے کو ان باتوں کی کوئی پرواہ نہیں۔ ہمارے پاس ایکسپورٹ سرپلس نہیں ہے کیونکہ ہم نے ویلیو ایڈیشن پر کام نہیں کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ کوئی بھی برآمد کنندہ اپنی برآمدی آمدنی کا دس فیصد تجارت کے فروغ کے لیے ملک سے باہر رکھتا ہے۔ جو لوگ ہم سے سٹال لینے آتے ہیں وہ روپے میں دیتے ہیں۔ انہیں ڈالر، پاو ¿نڈ اور یورو میں ادائیگی کرنی چاہیے۔انہوں نے کہا کہ 30 فیصد کوٹے میں ایس ایم ایز کا جائزہ لیا جائے گا۔ 10 فیصد جینڈرز کے لیے جبکہ 10 فیصد نئے برآمد کنندگان کے لیے مختص کیے جائیں گے۔ اس سے ہماری زرمبادلہ کی ضرورت 100% سے کم ہو کر 30% ہو جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ اگر آپ ایف اے ٹی ایف کو دیکھیں تو بیرونی طور پر کسی بھی چیز کی ادائیگی مشکل ہے۔

آئی ایم ایف کے جائزے کی وجہ سے دوسرے ممالک سے پیسہ آنا بھی بند ہو گیا ہے۔ ہمیں کھاد کی صنعتوں کو گیس کی سبسڈی ختم کرنی چاہیے۔ گھریلو گیس کی فراہمی پر سبسڈی ختم کی جائے۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے آئی پی پیز کے ساتھ معاہدے ہیں جن پر دوبارہ مذاکرات کرنا ہوں گے۔ ہمیں دوبارہ آئی ایم ایف کے ساتھ بیٹھ کر بات کرنی ہوگی تاکہ ہم سے ایسے اقدامات کرنے کو نہ کہا جائے جس سے طویل مدت میں ملک کے لیے مسائل پیدا ہوں۔

لاہور چیمبر کے صدر کاشف انور نے کہا کہ ٹی ڈیپ کی اولین ترجیح ملک میں صنعت سازی کے ذریعے درآمدات کے متبادل کا فروغ ہونا چاہیے۔ اس سے ہماراتجارتی خسارہ جو 2021-22میں 48ارب ڈالر اور رواں مالی سال کے پہلے 6ماہ میں 17ارب ڈالر سے تجاوز کر گیا ہے،کوکم کرنے میں مدد ملے گی۔

اسی تجارتی خسارے کی وجہ سے ہمیں زرمبادلہ کے بحران کا سامنا ہے ،جس کے نتیجے میں بینک LCs کھولنے میں مسئلہ کر رہے ہیںاور ہمارے ہزاروں کنٹینرز پورٹ پر پھنسے ہوئے ہیں ، جس سے مینوفیکچرنگ اور انڈسٹریل سیکٹر کی سپلائی چین بُری طرح متاثر ہورہی ہے ۔

انہوں نے کہا کہ مشینری، Automobile، الیکٹرک وہیکلز، موبائل ڈیوائسز، فوڈ، کاٹن،کھاد اور کیمیکل وغیرہ جیسے شعبوں میں Import Substitutionکے زبردست امکانات موجود ہیں۔ لاہور چیمبر کے صدر نے کہا کہ ہم اپنی مقامی صنعت بالخصوص ایس ایم ایز کی حوصلہ افزائی کئے بغیر برآمدات میں اضافہ نہیں کر سکتے۔ہماری لوکل انڈسٹری کو ٹیکسوں اور متعدد سرکاری محکموں کے حوالے سے بہت سے مسائل کا سامنا ہے۔

ہماری ایس ایم ایز کو بہت سا خام مال، ضروری Componentsاور مختلف مشینری جوکہ ملک میں دستیاب نہیں ہوتیں،درآمد کرنا پڑتی ہےںجس پر انہیں 100فیصد کیش مارجن ، ریگولیٹری ڈیوٹی ، کسٹم ڈیوٹی اور ایڈیشنل کسٹم ڈیوٹی اداکرنا ہوتی ہے جن کو ختم کرنے کی ضرورت ہے۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.