امریکہ پاکستان کے ساتھ دوطرفہ اقتصادی تعلقات کو فروغ دینے کا خواہاں ہے: ڈونلڈ بلوم

84

پاکستان میں امریکی سفیر ڈونلڈ بلوم نے کہا ہے کہ امریکی حکومت پاکستان کے ساتھ دو طرفہ تجارتی تعلقات کو فروغ دینے کی خواہشمند ہے۔ پاکستان اور امریکہ کے باہمی تعلقات کا مستقبل تجارت، سرمایہ کاری، موسمیاتی تبدیلی، توانائی اور تعلیم کے شعبوں میں مزید رابطوں پر مبنی ہوگا۔

انہوں نے اس امر کا اظہار گزشتہ روز مسٹر کرس ریٹگرز، FAS کونسلر اور مسٹر کیون چنگ، اکنامک کونسلر کے ہمراہ آل پاکستان ٹیکسٹائل ملز ایسوسی ایشن (آپٹما) کے ممبران سے آپٹما لاہور کے دفتر کے دورے کے دوران کیا ۔

ڈاکٹر گوہر اعجاز، سرپرست اعلیٰ، حامد زمان، چیئرمین ناردرن زون، کامران ارشد سینئر وائس چیئرمین، اسد شفیع، وائس چیئرمین رضا باقر اور شاہد ستار اور ٹیکسٹائل کی معروف نمائندگی کرنے والے اپٹما کے سینئر ممبران نے وفد کا خیر مقدم کیا۔ ڈونلڈبلوم نے کہا کہ کپاس اور ٹیکسٹائل کے شعبے میں مل کر کام کرنے کے ساتھ ساتھ دیگر توجہ مرکوز شعبوں میں تجارت اور سرمایہ کاری کے تعلقات کو بڑھانے کے بہت زیادہ امکانات ہیں۔

امریکی سفیر نے کہا کہ پاکستان میں ٹیکسٹائل اور دیگر شعبوں میں ترقی کی مضبوط صلاحیت ہے اور اس کے برآمد کنندگان امریکہ کی طرف سے پیروی کی گئی لبرل اقتصادی پالیسیوں سے باآسانی فائدہ اٹھا سکتے ہیں۔ انہوں نے اپٹما کی قیادت کو تجویز پیش کی کہ وہ تجارتی حجم کو بڑھانے اور دونوں ممالک کے درمیان اقتصادی شراکت داری کا زیادہ سے زیادہ فائدہ حاصل کرنے کے لیے اپنے امریکی ہم منصبوں کے ساتھ مسلسل مصروفیات اور بات چیت پر توجہ مرکوز کرے۔
ڈونلڈ بلوم نے تجارتی اور سرمایہ کاری کے تعلقات کو بڑھانے کے لیے درپیش مسائل پر بھی روشنی ڈالی اور اس امید کا اظہار کیا کہ حکومت مسلسل کوششوں سے ان پر قابو پالے گی۔ انہوں نے یہ بھی امید ظاہر کی کہ وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ امریکی خریدار پاکستان میں اپنے دفاتر کھولیں گے۔

انہوں نے مزید کہا کہ پاکستانی تاجروں کے لیے یہ ایک چیلنج ہے کہ وہ پاکستان میں امریکی سرمایہ کاری کو کس طرح راغب کرتے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان خطے میں سب سے زیادہ لاگت کا مقابلہ کرنے والا ملک ہے لیکن اسے ٹیکس لگانے، منافع کی واپسی، پالیسیوں پر غیر متوقع صورتحال اور قانونی نظام وغیرہ سے متعلق مسائل کو حل کرنے کے علاوہ اسے بہتر کرنے کی ضرورت ہے۔

امریکی سفیر نے کہا کہ امریکی سرمایہ کار پاکستان کے مختلف حصوں میں زراعت کے شعبے میں سرگرم ہیں۔قبل ازیں اس موقع پر اظہار خیال کرتے ہوئے اپٹما کے سرپرست اعلیٰ ڈاکٹر گوہر اعجاز نے خاص طور پر برآمدی سیکٹرز میں تعلیم اور تحقیق کے شعبے میں پاکستان کی مدد کرنے پر زور دیا تاکہ نوجوان پاکستانیوں کی صلاحیتوں کو بڑھایا جا سکے ۔

انہوں نے امریکی سفیر پر زور دیا کہ وہ امریکی مارکیٹ تک ڈیوٹی فری رسائی حاصل کرنے میں پاکستان کی مدد کریں تاکہ اسے دوسرے حریفوں کے مقابلے میں مسابقتی بنایا جا سکے۔ آگے بڑھنے کا راستہ بتاتے ہوئے، انہوں نے غربت اور بے روزگاری کو کم کرنے کے لیے امریکہ کو پاکستانی برآمدات کے لیے ڈیوٹی فری رسائی پر زور دیا اور جی ایس پی پلس کی طرح پاکستان تک رسائی کو بڑھایا جیسا کہ یورپی یونین نے پہلے ہی بڑھا دیا ہے۔

انہوں نے نشاندہی کی کہ پاکستان نے انسانی حقوق، چائلڈ لیبر، صنفی حقوق، مزدوروں کے حقوق، ماحولیات، منشیات اور بدعنوانی کے کنٹرول وغیرہ سے متعلق 27 بین الاقوامی کنونشنز کی مکمل تعمیل کی ہے۔اپٹما کے سینئر وائس چیئرمین کامران ارشد نے پاکستان میں ٹیکسٹائل انڈسٹری کی مضبوطی کے بارے میں تفصیلی پریزنٹیشن دی۔

انہوں نے کہا کہ امریکہ 2021-22 میں 9.85 بلین ڈالر کی کل دو طرفہ تجارت کے ساتھ پاکستان کا سب سے بڑا تجارتی شراکت دار ہے۔

ان کے مطابق امریکہ کو پاکستان کی کل برآمدات 6.8 بلین ڈالر رہیں جبکہ امریکہ سے 3.0 بلین ڈالر کی کل درآمدات تھیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ امریکہ پاکستان میں براہ راست غیر ملکی سرمایہ کاری کا سب سے بڑا ذریعہ ہے اور اس کے ساتھ ساتھ امریکہ سے پاکستان میں 3.1 بلین امریکی ڈالر کی ترسیلات زر بھی ہیں۔

اپٹما نارتھ زون کے چیئرمین حامد زمان نے کہا کہ دونوں ممالک میں مل کر کام کرنے کی بڑی صلاحیت ہے۔ انہوں نے امریکی سفیر کے مثبت انداز کو سراہتے ہوئے اس امید کا اظہار کیا کہ وہ دونوں ممالک کے درمیان دوطرفہ تجارت اور سرمایہ کاری کے تعلقات کو استوار کرنے میں اپنا کردار ادا کریں گے۔

وائس چیئرمین مسٹر اسد شفیع نے ملاقات کے اختتام پر دورہ کرنے والے وفدکا شکریہ ادا کیا اور امید کا اظہار کیا کہ وفد کے دورے سے دونوں ممالک کے درمیان باہمی تجارتی تعاون کو فروغ دینے میں مدد ملے گی۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.